His Supplications for Himself & the People under his Guardianship – اپنے لیے اور اپنے دوستوں کے لیے حضرت کی دعا

dua

و تصيرهم الي امن من مقيل المتقين .يا من لا تنقضي عجائب عظمته ، صل علي محمد و اله ، واحجبنا عن الالحاد في عظمتك .و يا من لا تنتهي مدة ملكه ، صل علي محمد و اله ، و اعتق رقابنا من نقمتك .و يا من لا تفني خزائن رحمته ، صل علي محمد و اله ، و اجعل لنا نصيبا في رحمتك .و يا من تنقطع دون رؤيته الابصار ، صل علي محمد و اله ، و ادننا الي قربك .و يا من تصغر عند خطره الاخطار ، صل علي محمد و اله ، و كرمنا عليك .و يا من تظهر عنده بواطن الاخبار ، صل علي محمد و اله ، و لا تفضحنا لديك .اللهم اغننا عن هبة الوهابين بهبتك ، و اكفنا وحشة القاطعين بصلتك حتي لا نرغب الي احد مع بذلك ، و لا نستوحش من احد مع فضلك .اللهم فصل علي محمد و اله ، و كد لنا و لا تكد علينا ، و امكر لنا و لا تمكر بنا ، و ادل لنا و لا تدل منا .اللهم صل علي محمد و اله ، و قنا منك ، و احفظنا بك ، و اهدنا اليك ، و لا تباعدنا عنك ، ان من تقه يسلم ، و من تهده يعلم ، و من تقربه اليك يغنم .اللهم صل علي محمد و اله ، و اكفنا حد نوائب الزمان ، و شر مصائد الشيطان ، و مرارة صولة السلطان .اللهم انما يكتفي المكتفون بفضل قوتك ، فصل علي محمد و اله ، و اكفنا ، و انما يعطي المعطون من فضل جدتك ، فصل علي محمد و اله ، و اعطنا ، و انما يهتدي المهتدون بنور وجهك ، فصل علي محمد و اله ، و اهدنا .اللهم انك من واليت لم يضرره خذلان الخاذلين ، و من اعطيت لم ينقصه منع المانعين ، و من هديت لم يغوه اضلال المضلين .فصل علي محمد و اله ، و امنعنا بعزك من عبادك ، و اغننا عن غيرك بارفادك ، و اسلك بنا سبيل الحق بارشادك .اللهم صل علي محمد و اله ، و اجعل سلامة قلوبنا في ذكر عظمتك ، و فراغ ابداننا في شكر نعمتك ، و انطلاق السنتنا في وصف منتك .اللهم صل علي محمد و اله ، و اجعلنا من دعاتك الداعين اليك ، و هداتك الدالين عليك ، و من خاصتك الخاصين لديك ، يا ارحم الراحمين .
****************************************************************************************
اے وہ جس کی بزرگی وعظمت کے عجائب ختم ہونے والے نہیں ۔ تو محمد اوران کی آل پر رحمت نازل فرما اورہمیں اپنی عظمت کے پردوں میں چھپا کر کج اندیشیوں سے بچا لے ۔ اے وہ جس کی شاہی وفرمانروائی کی مدت ختم ہونے والی نہیں تو رحمت نازل کر محمد اور ا ن کی آل پراورہماری گردنوں کو اپنے غضب وعذاب ( بندھنوں ) سے آزاد رکھ ۔ اے وہ جس کی رحمت کے خزانے ختم ہونے والے نہیں۔ رحمت نازل فرما محمد اوران کی آل پر اور اپنی رحمت میں ہمارا بھی حصہ قرار دے۔ اے وہ جس کے مشاہدہ سے آنکھیں قاصر ہیں رحمت نازل فرما محمد اور ان کی آل پر اوراپنی بارگاہ سے ہم کو قریب کر لے۔ اے وہ جس کی عظمت کے سامنے تمام عظمتیں پست و حقیر ہیں رحمت نازل فرما محمد اوران کی آل پر اورہمیں اپنے ہاں عزت عطا کر۔ اے وہ جس کے سامنے راز ہائے سر بستہ ظاہر ہیں رحمت نازل فرما محمد اوران کی آل پر اور ہمیں اپنے سامنے رسوا نہ کر۔ بارالہا! ہمیں اپنی بخشش وعطا کی بدولت بخشش کرنے والوں کی بخشش سے بے نیاز کر دے اوراپنی پیوستگی کے ذریعہ قطع تعلق کرنے والوں کی بے تعلقی ودوری کی تلافی کر دے تاکہ تیری بخشش وعطا کے ہوتے ہوئے دوسرے سے سوال نہ کریں اورتیرے فضل واحسان کے ہوتے ہوئے کسی سے ہراساں نہ ہوں۔ اے اللہ ! محمد اورا ن کی آل پر رحمت نازل فرما اورہمارے نفع کی تدبیر کر اورہمارے نقصان کی تدبیر نہ کر اورہم سے مکر کرنے والے دشمنوں کو اپنے مکر کا نشانہ نہ بنا اور ہمیں اس کی زد پر نہ رکھ ۔ اورہمیں دشمنوں پر غلبہ دے دشمنوں کو ہم پر غلبہ نہ دے ۔ بارالہا ! محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل فرما اورہمیں اپنی ناراضی سے محفوظ رکھ اوراپنے فضل وکرم سے ہماری نگہداشت فرما اور اپنی جانب ہمیں ہدایت کر اوراپنی رحمت سے دور نہ کر کہ جسے تو اپنی ناراضگی سے بچائے گا وہی بچے گا اورجسے تو ہدایت کرے گا وہی (حقائق پر ) مطلع ہو گا اورجسے تو (اپنی رحمت سے )قریب کرے گا وہی فائدہ میں رہے گا۔ اے معبود !تو محمد اور ان کی آل پر رحمت نازل فرما اورہمیں زمانہ کے حوادث کی سختی اورشیطان کے ہتھکنڈوں کی فتنہ انگیزی اورسلطان کے قہر وغلبہ کی تلخ کلامی سے اپنی پناہ میں رکھ ۔ بارالہا! بے نیاز ہونے والے تیرے ہی کمال قوت واقتدار کے سہارے بے نیاز ہوتے ہیں ۔ رحمت نازل فرما محمد اور ان کی آل پر اور ہمیں بے نیاز کر دے اورعطا کرنے والے تیری ہی عطا وبخشش کے حصہ وافر میں سے عطا کرتے ہیں ۔ رحمت نازل فرما محمد اور ان کی آل پر اور ہمیں بھی (اپنے خزانہ رحمت سے )عطا فرما۔ اور ہدایت پانے والے تیری ہی ذات کی درخشندگیوں سے ہدایت پاتے ہیں ۔ رحمت نازل فرما محمد اوران کی آل پراورہمیں ہدایت فرما۔ بارالہا ! جس کی تو نے مدد کی اسے مدد نہ کرنے والوں کا مدد سے محروم رکھنا کچھ نقصان نہیں پہنچا سکتا۔ اورجسے تو عطا کرے اس کے ہاں روکنے والوں کے روکنے سے کچھ کمی نہیں ہو جاتی ۔اورجس کی تو خصوصی ہدایت کرے اسے گمراہ کرنے والوں کا گمراہ کرنا بے راہ نہیں کر سکتا۔ رحمت نازل فرما محمد اور ان کی آل پر اوراپنے غلبہ اورقوت کے ذریعہ بندوں(کے شر) سے ہمیں بچائے رکھ اوراپنی عطا وبخشش کے ذریعہ دوسروں سے بے نیاز کر دے اوراپنی رہنمائی سے ہمیں راہ حق پر چلا۔ اے معبود ! تو محمد اوران کی آل پر رحمت نازل فرما اورہمارے دلوں کی سلامتی اپنی عظمت کی یاد میں قرار دے اورہماری جسمانی فراغت (کے لمحوں ) کو اپنی نعمت کے شکریہ میں صرف کر دے اورہماری زبانوں کی گویائی کو اپنے احسان کی توصیف کے لیے وقف کر دے۔ اے اللہ ! تو رحمت نازل فرما محمد اوران کی آل پر اور ہمیں ان لوگوں میں سے قرار دے جو تیری طرف دعوت دینے والے اورتیری طرف کا راستہ بتانے والے ہیں اوراپنے خاص الخاص مقربین میں سے قرار دے۔ اے سب رحم کرنے والوں سے زیادہ رحم کرنے والے۔

****************************************************************************************
His Supplication for himself and the People under his Guardianship O He the wonders of whose mightiness will never end ! bless Muhammad and his Household and prevent us from deviation concerning Thy mightiness ! O He the term of whose kingdom will never cease ! bless Muhammad and his Household and release our necks from Thy vengeance ! O He the treasuries of whose mercy will never be exhausted ! bless Muhammad and his Household and appoint for us a portion of Thy mercy ! O He whom eyes fall short of seeing ! bless Muhammad and his Household and bring us close to Thy nearness ! O He before whose greatness all great things are small ! bless Muhammad and his Household and give us honour with Thee ! O He to whom all hidden tidings are manifest ! bless Muhammad and his Household and expose us not before Thee ! O God , remove our need for the gifts of the givers through Thy gift , spare us the loneliness of those who break off through Thy joining , that we may beseech no one along with Thy free giving , that we may feel lonely at no one’s absence along with Thy bounty ! O God , bless Muhammad and his Household , scheme for us , not against us , devise to our benefit , not to our loss , give the turn to prevail to us , not to others ! O God , bless Muhammad and his Household , protect us from Thyself , safeguard us through Thyself , guide us to Thyself , and take us not far from Thyself ! He whom Thou protectest stays safe , he whom Thou guidest knows , and he whom Thou bringest near Thyself takes the spoils . O God , bless Muhammad and his Household and spare us the cutting edge of time’s turning changes , the evil of Satan’s snares , and the bitterness of the sovereign’s aggression ! O God , the spared are spared only through the bounty of Thy strength , so bless Muhammad and his Household and spare us ! The givers give only through the bounty of Thy wealth , so bless Muhammad and his Household and give to us ! The guided are guided only by the light of Thy face , so bless Muhammad and his Household and guide us ! O God , he whom Thou befriendest will not be injured by the abandonment of the abandoners , he to whom Thou guidest will not be diminished by the withholding of the withholders , he whom Thou guidest will not be misled by the misguidance of the misguiders . So bless Muhammad and his Household , defend us from Thy servants through Thy might , free us from need for other than Thee through Thy support , and make us travel the path of the Truth through Thy right guidance ! O God , bless Muhammad and his Household and put the soundness of our hearts into the remembrance of Thy mightiness , the idleness of our bodies into giving thanks for thy favour , and the flow of our tongues into the description of Thy kindness ! O God , bless Muhammad and his Household and make us one of Thy summoners who summon to Thee , Thy guiders who direct to Thee , and Thy special friends whom Thou hast singled out ! O Most Merciful of the merciful !

Blessings upon the Attesters of the Messengers – انبیاء کے تابعین اور ان پر ایمان لانے والوں کے حق میں دعا

sahifa-e-sajadia

اللهم و اتباع الرسل و مصدقوهم من اهل الارض بالغيب عند معارضة المعاندين لهم بالتكذيب و الاشتياق الي المرسلين بحقائق الايمان .في كل دهر و زمان ارسلت فيه رسولا و اقمت لاهله دليلا من لدن ادم الي محمد – صلي الله عليه و اله – من أئمة الهدي ، و قادة اهل التقي ، علي جميعهم السلام ، فاذكرهم منك بمغفرة و رضوان .اللهم و اصحاب محمد خاصة الذين احسنوا الصحابة و الذين ابلوا البلاء الحسن في نصره ، و كانفوه ، و اسرعوا الي وفادته ، و سابقوا الي دعوته ، و استجابوا له حيث اسمعهم حجة رسالاته .و فارقوا الازواج و الاولاد في اظهار كلمته ، و قاتلوا الاباء و الابناء في تثبيت نبوته ، و انتصروا به .و من كانوا منطوين علي محبته يرجون تجارة لن تبور في مودته .و الذين هجرتهم العشائر اذ تعلقوا بعروته ، و انتفت منهم القرابات اذ سكنوا في ظل قرابته .فلا تنس لهم اللهم ما تركوا لك و فيك ، و ارضهم من رضوانك ، و بما حاشوا الخلق عليك ، و كانوا مع رسولك دعاة لك اليك .و اشكرهم علي هجرهم فيك ديار قومهم ، و خروجهم من سعة المعاش الي ضيقه ، و من كثرت في اعزاز دينك من مظلومهم .اللهم و اوصل الي التابعين لهم باحسان ، الذين يقولون : ربنا اغفر لنا و لاخواننا الذين سبقونا بالايمان خير جزائك .الذين قصدوا سمتهم ، و تحروا وجهتهم ، و مضوا علي شاكلتهم .لم يثنهم ريب في بصيرتهم ، و لم يختلجهم شك في قفو اثارهم ، و الايتمام بهداية منارهم .مكانفين و موازرين لهم ، يدينون بدينهم ، و يهتدون بهديهم ، يتفقون عليهم ، و لا يتهمونهم فيما ادوا اليهم .اللهم و صل علي التابعين من يومنا هذا الي يوم الدين و علي ازواجهم و علي ذرياتهم و علي من اطاعك منهم .صلوة تعصمهم بها من معصيتك ، و تفسح لهم في رياض جنتك ، و تمنعهم بها من كيد الشيطان ، و تعينهم بها علي ما استعانوك عليه من بر ، و تقيهم طوارق الليل و النهار إلا طارقا يطرق بخير .و تبعثهم بها علي اعتقاد حسن الرجاء لك ، و الطمع فيما عندك ، و ترك التهمة فيما تحويه ايدي العباد .لتردهم الي الرغبة اليك و الرهبة منك ، و تزهدهم في سعة العاجل ، و تحبب اليهم العمل للاجل ، و الاستعداد لما بعد الموت .و تهون عليهم كل كرب يحل بهم يوم خروج الانفس من ابدانها .و تعافيهم مما تقع به الفتنة من محذوراتها ، و كبة النار و طول الخلود فيها .و تصيرهم الي امن من مقيل المتقين .
****************************************************************************************
اے اللہ ! تو اہل زمین میں سے رسولوں کی پیروی کرنے والوں اور ان مومنین کو اپنی مغفرت اورخوشنودی کے ساتھ یاد فرما جو غیب کی رو سے ان پر ایمان لائے اس وقت کہ جب دشمن ان کے جھٹلانے کے درپے تھے اور اس وقت کہ جب وہ ایمان کی حقیقتوں کی روشنی میں ان کے (ظہور کے ) مشتاق تھے ۔ ہر اس دور اور ہر اس زمانہ میں جس میںتو نے کوئی رسول بھیجا اوراس وقت کے لوگوں کے لیے کوئی رہنما مقرر کیا ۔ حضرت آدم کے وقت سے کے کر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے عہد تک جو ہدایت کے پیشوا اورصاحبان تقوی کے سربراہ تھے ( ان سب پر سلام ہو ) بارالہا!خصوصیت سے اصحاب محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں سے وہ افراد جنہوں نے پوری طرح پیغمبر کا ساتھ دیا۔ اوران کی نصرت میں پوری شجاعت کا مظاہرہ کیا اور ان کی مدد پر کمر بستہ رہے اوران پر ایمان لانے میں جلد ی اوران کی دعوت کی طرف سبقت کی ۔ اور جب پیغمبرنے اپنی رسالت کی دلیلیں ان کے گوش گزار کیں تو انہوں نے لبیک کہی اور ان کا بول بالا کرنے کے لیے بیوی بچوں کو چھوڑ دیا اور امر نبوت کے استحکام کے لیے باپ اوربیٹوں تک سے جنگیں کیں اورنبی اکرم کے وجود کی برکت سے کامیابی حاصل کی اس حالت میں کہ ان کی محبت دل کے ہر رگ وریشہ میں لئے ہوئے تھے اورا ن کی محبت ودوستی میں ایسی نفع بخش تجارت کے متوقع تھے جس میں کبھی نقصان نہ ہو۔ اور جب ان کے دین کے بندھن سے وابستہ ہوئے تو ان کے قوم قبیلے نے انہیں چھوڑ دیا۔اورجب ان کے سایہ قرب میں منزل کی تو اپنے بیگانے ہو گئے تو اے میرے معبود !انہو ں نے تیری خاطر اورتیری راہ میں جو سب کو چھوڑ دیا تو (جزائے کے موقع پر ) انہیں فراموش نہ کیجئیواوران کی فدا کاری اورخلق خدا کو تیرے دین پر جمع کرنے اوررسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ داعی حق بن کر کھڑا ہونے کا صلہ میں انہیں اپنی خوشنودی سے سرفراز وشاد کان فرما اورانہیں اس امر پر بھی جزاد ے کہ انہو ں نے تیری خاطر اپنے قوم قبیلے کے شہروں سے ہجرت کی اور وسعت معاش سے تنگی معاش میں جا پڑے اوریونہی ان مظلوموں کی خوشنودی کا سامان کر کہ جن کی تعداد کو تو نے اپنے دین کو غلبہ دینے کے لیے بڑھایا بارالہا ۔ جنہوں نے اصحاب رسول کی احسن طریق سے پیروی کی انہیں بہترین جزائے خیر دے جو ہمیشہ یہ دعا کرتے رہے کہ اے ہمارے پروردگار! توہمیں اور ہمارے بھائیوں کو بخشدے جو ایمان لانے میں ہم سے سبقت لے گئے ۔ اور جن کا مطمع نظر اصحاب کا طریق رہا اور انہی کا طور طریقہ اختیار کیا اور انہی کی روش پر گامزن ہوئے ۔ ان کی بصیرت میں کبھی شبہ کا گزر نہیں ہوا کہ انہیں( راہ حق سے ) منحرف کرتا اور ان کے نقش قدم پر گام فرسائی اور ان کے روشن طرز عمل کی اقتداء میں انہیں شک و تردد نے پریشان نہیں کیا وہ اصحاب نبی کے معاون و دستگیر اور دین میں ان کے پیرو کار اورسیرت واخلاق میں ا ن سے درس آموز رہے اورہمیشہ ان کے ہمنوا رہے اور ان کے پہنچائے ہوئے احکام میں ان پر کوئی الزام نہ دھرا ۔ بارالہا! ان تابعین اوران کے ازواج اور آل اولاد اور ان میں سے جو تیرے فرمانبردار ومطیع ہیں ان پر آج سے لے کر روز قیامت تک درود و رحمت بھیج۔ ایسی رحمت جس کے ذریعہ تو انہیں معصیت سے بچائے ، جنت کے گلزاروں میں فراخی ووسعت دے۔ شیطان کے مکر سے محفوظ رکھے اورجس کارخیر میں تجھ سے مدد چاہیں ان کی مدد کرے اورشب وروز کے حوادث سے سوائے کسی نوید خیر کے ان کی نگہداشت کرے اوراس بات پر انہیں آمادہ کرے کہ وہ تجھ سے حسن امید کا عقیدہ وابستہ رکھیں اورتیرے ہاں کی نعمتوں کی خواہش کریں ۔ اوربندوں کے ہاتھوں میں فراخی نعمت کو دیکھ کر تجھ پر (بے انصافی کا ) الزام نہ دھریں تاکہ تو ان کا رخ اپنے امید وبہم کی طرف پھیر دے اوردنیا کی وسعت وفراخی سے انہیں بے تعلق کر دے اورعمل آخرت اورموت کے بعد کی منزل کا ساز وبرگ مہیا کرنا ان کی نگاہوں میں خوش آیند بنا دے اورروحوں کے جسموں سے جدا ہونے کے دن ہر کرب واندوہ جو ان پر وارد ہو آسان کر دے اورفتنہ و آزمائش سے پیدا ہونے والے خطرات اورجہنم کی شدت اوراس میں ہمیشہ پڑے رہنے سے نجات دے اور انہیں جائے امن کی طرف جو پرہیز گاروں کی آسائش گاہ ہے منتقل کر دے ۔

****************************************************************************************
His Supplication in Calling down Blessings upon the Followers of , and Attesters to , the Messengers O God , as for the followers of the messengers and those of the people of the earth who attested to them unseen ( while the obstinate resisted them through crying lies ) – they yearned for the emissaries through the realities of faith , in every era and time in which Thou didst send a messenger and set up for the people a director from the period of Adam down to Muhammad ( God bless him and his Household ) from among the imams of guidance and the leaders of the godfearing ( upon them all be peace ) – remember them with forgiveness and good pleasure ! O God , and as for the Companions of Muhammad specifically , those who did well in companionship , who stood the good test in helping him , responded to him when he made them hear his messages’ argument , separated from mates and children in manifesting his word , fought against fathers and sons in strengthening his prophecy , and through him gained victory ; those who were wrapped in affection for him , ‘hoping for a commerce that comes not to naught’ in love for him ; those who were left by their clans when they clung to his handhold and denied by their kinsfolk when they rested in the shadow of his kinship ; forget not , O God , what they abandoned for Thee and in Thee , and make them pleased with Thy good pleasure for the sake of the creatures they drove to Thee while they were with Thy Messenger , summoners to Thee for Thee . Show gratitude to them for leaving the abodes of their people for Thy sake and going out from a plentiful livelihood to a narrow one , and ( show gratitude to ) those of them who became objects of wrongdoing and whom Thou multiplied in exalting Thy religion . O God , and give to those who have done well in following the Companions , who say , ‘Our Lord , forgive us and our brothers who went before us in faith’ , Thy best reward ; those who went straight to the Companion’s road , sought out their course , and proceeded in their manner . No doubt concerning their sure insight diverted them and no uncertainty shook them from following in their tracks and being led by the guidance of their light . As their asistants and supporters , they professed their religion , gained guidance through their guidance , came to agreement with them , and never accused them in what they passed on to them . O God , and bless the Followers , from this day of ours to the Day of Doom , their wives , their offspring , and those among them who obey Thee , with a blessing through which Thou wilt preserve them from disobeying Thee , make room for them in the plots of Thy Garden , defend them from the trickery of Satan , help them in the piety in which they seek help from Thee , protect them from sudden events that come by night and day – except the events which come with good – and incite them to tie firmly the knot of good hope in Thee , what is with Thee , and refrain from ill thoughts ( toward Thee ) because of what the hands of Thy servants’ hold . Thus Thou mayest restore them to beseeching Thee and fearing Thee , induce them to renounce the plenty of the immediate , make them love to work for the sake of the deferred and prepare for what comes after death , make easy for them every distress that comes to them on the day when souls take leave from bodies , release them from that which brings about the perils of temptation and being thrown down in the Fire and staying forever within it , and take them to security , the resting place of the godfearing .

Blessings upon the Bearers of the Throne – حاملان عرش اور دوسرے مقرب فرشتوں پر درود و سلام

sahifa-e-sajadia

اللهم و حملة عرشك الذين لا يفترون من تسبيحك ، و لا يسئمون من تقديسك ، و لا يستحسرونك من عبادتك ، و لا يؤثرون التقصير علي الجد في امرك ، و لا يغفلون عن الوله اليك .و اسرافيل صاحب الصور ، الشاخص الذي ينتظر منك الاذن ، و حلول الامر ، فينبه بالنفخة صرعي رهائن القبور .و ميكائيل ذو الجاه عندك ، و المكان الرفيع من طاعتك .و جبريل الامين علي وحيك ، المطاع في اهل سمواتك ، المكين لديك ، المقرب عندك .و الروح الذي هو علي ملائكة الحجب .و الروح الذي هو امرك ، فصل عليهم ، و علي الملائكة الذين من دونهم : من سكان سمواتك ، و اهل الامانة علي رسالاتك .و الذين لا تدخلهم سئمة من دؤب ، و لا اعياء من لغوب و لا فتور ، و لا تشغلهم عن تسبيحك الشهوات ، و لا يقطعهم عن تعظيمك سهو الغفلات .الخشع الابصار فلا يرومون النظر اليك ، النواكس الاذقان ، الذين قد طالت رغبتهم فيما لديك ، المستهترون بذكر الائك ، و المتواضعون دون عظمتك و جلال كبريائك .و الذين يقولون إذا نظروا الي جهنم تزفر علي اهل معصيتك : سبحانك مما عبدناك حق عبادتك .فصل عليهم و علي الروحانيين من ملائكتك ، و اهل الزلفة عندك ، و حمال الغيب الي رسلك ، و المؤتمنين علي وحيك .و قبائل الملائكة الذين اختصصتهم لنفسك ، و اغنيتهم عن الطعام و الشراب بتقديسك ، و اسكنتهم بطون اطباق سمواتك .و الذين علي ارجائها إذا نزل الامر بتمام وعدك .و خزان المطر و زواجر السحاب .و الذي بصوت زجره يسمع زجل الرعود ، و إذا سبحت به حفيفة السحاب التمعت صواعق البروق .و مشيعي الثلج و البرد ، و الهابطين مع قطر المطر إذا نزل ، و القوام علي خزائن الرياح ، و الموكلين بالجبال فلا تزول .و الذين عرفتهم مثاقيل المياه ، وكيل ما تحويه لواعج الامطار و عوالجها .و رسلك من الملائكة الي اهل الارض بمكروه ما ينزل من البلاء و محبوب الرخاء .و السفرة الكرام البررة ، و الحفظة الكرام الكاتبين ، و ملك الموت و اعوانه ، و منكر و نكير ، و رومان فتان القبور ، و الطائفين بالبيت المعمور ، و مالك ، و الخزنة ، و رضوان ، و سدنة الجنان .و الذين لايعصون الله ما امرهم ، و يفعلون ما يؤمرون .و الذين يقولون : سلام عليكم بما صبرتم فنعم عقبي الدار .و الزبانية الذين إذا قيل لهم : خذوه فغلوه ثم الجحيم صلوه ابتدروه سراعا ، و لم ينظروه .و من اوهمنا ذكره ، و لم نعلم مكانه منك ، و باي امر وكلته .و سكان الهواء و الارض و الماء و من منهم علي الخلق .فصل عليهم يوم يأتي كل نفس معها سائق و شهيد .و صل عليهم صلوة تزيدهم كرامة علي كرامتهم و طهارة علي طهارتهم .اللهم و إذا صليت علي ملائكتك و رسلك و بلغتهم صلوتنا عليهم فصل علينا بما فتحت لنا من حسن القول فيهم ، إنك جواد كريم .
****************************************************************************************
اے اللہ ! تیرے عرش کے اٹھانے والے فرشتے جو تیری تسبیح سے اکتاتے نہیں اورنہ تیری عبادت سے خستہ وملول ہوتے ہیں اور نہ تیرے تعمیل امت میں سعی وکوشش کے بجائے کوتاہی برتتے ہیں اورنہ تجھ سے لو لگانے میں غافل ہوتے ہیں اور اسرافیل صاحب صور جو نظر اٹھائے ہوئے تیری اجازت اورنفاذ حکم کے منتظر ہیں تا کہ صور پھونک کر قبروں میں پڑے ہوئے مردوں کو ہوشیار کریں اور میکائیل جو تیرے یہاں مرتبہ والے اورتیری اطاعت کی وجہ سے بلند منزلت ہیں اورجبرئیل جو تیری وحی کے امانتدار اوراہل آسمان جن کے مطیع وفرمانبردار ہیں اورتیری بارگاہ میں مقام بلند اورتقرب خاص رکھتے ہیں اور وہ روح جو فرشتگان حجاب پر موکل ہے اور وہ روح جس کی خلقت تیرے عالم امر سے ہے اورسب پر اپنی رحمت نازل فرما اوراسی طرح ان فرشتوں پر جو ان سے کم درجہ اور آسمانوں میں ساکن اورتیرے پیغاموں کے امین ہیں اور ان فرشتوں پر جن میں کسی سعی کوشش سے بدلی اورکسی مشقت سے خستگی و درماندگی پیدا نہیں ہوتی اور نہ تیری تسبیح سے نفسانی خواہشیں انہیں روکتی ہیں اور نہ ان میں غفلت کی رو سے ایسی بھول چوک پیدا ہوتی ہے جو انہیں تیری تعظیم سے باز رکھے ۔ وہ آنکھیں جھکائے ہوئے ہیں کہ (تیرے نور عظمت کی طرف )نگاہ اٹھانے کا ارادہ بھی نہیں کرتے اورٹھوریوں کے بل گرے ہوئے ہیں اور تیرے یہاں کے درجات کی طرف ان کا اشتیاق بے حد و بے نہایت ہے اورتیری نعمتوں کی یاد میں کھوئے ہوئے ہیں اورتیری عظمت اورکبریائی کے سامنے سرافگندہ ہیں اور ان فرشتوں پر جو جہنم کو گنہگاروں پر شعلہ ور دیکھتے ہیں تو کہتے ہیں : پاک ہے تیری ذات ! ہم نے تیری عبادت جیسا حق تھا ویسی نہیں کی ۔(اے اللہ !) تو ان پر اورفرشتگان رحمت پر اور ان پر جنہیںتیری بارگاہ میں تقرب حاصل ہے اور تیرے پیغمبروں کی طرف چھپی ہوئی خبریں لے جانے والے اور تیری رحمت کے امانت دار ہیں اور ان قسم کے فرشتوں پر جنہیں تو نے اپنے لیے مخصوص کر لیا ہے اورجنہیں تسبیح اورتقدیس کے ذریعہ کھانے پینے سے بے نیاز کر دیا ہے اورجنہیں آسمانی طبقات کے اندرونی حصوں میں بسایا ہے اور ان فرشتوں پر جوآسمان کے کناروں میں توقف کریں گے جب کہ تیرا حکم وعدے کے پورا کرنے کے سلسلہ میں صادر ہو گا۔ اوربارش کے خزینہ داروں اوربادلوں کے ہنکانے والوں پر اوراس پر جس کے جھڑکنے سے رعد کی کڑک سنائی دیتی ہے اورجب اس ڈانٹ ڈپٹ پر گرجنے والے بد دل رواں ہوتے ہیں تو بجلی کو کوندے تڑپنے لگتے ہیں اور ان فرشتوں پر جو برف اور راویوں کے ساتھ ساتھ رہتے ہیں اور جب بارش ہوتی ہے تو اس کے قطروں کے ساتھ اترتے ہیں اور ہوا کے ذخیروں کی دیکھ بھال کرتے ہیں اور ان فرشتوں پر جو پہاڑوں پر موکل ہیں تاکہ وہ اپنی جگہ سے ہٹنے نہ پائیں اوران فرشتوں پر جنہیں تو نے پانی کے وزن اورموسلادھار اورتلاطم افزا بارشوں کی مقدار پر مطیع کیا ۔اوران فرشتوں پر جو نا گوار ابتلاوں اور خوش آیند آسائشوں کو لے کر اہل زمین کی جانب تیرے فرستادہ ہیں اور ان پر جو اعمال کا احاطہ کرنے والے گرامی منزلت اور نیکوکار ہیں اور ان پر جو نگہبانی کرنے والے کراما کاتبین ہیں اورملک الموت اور اس کے اعوان وانصار اورمنکر نکیر اوراہل قبور کی آزمائش کرنے والے رومان پراور بیت المعمور کا طواف کرنے والوں پر اور مالک اورجہنم کے دربانوں پر اور رضوان اورجنت کے دوسرے پاسبانوں پر اورفرشتوں پر جو خدا کے حکم کی نافرمانی نہیں کرتے اورجو حکم انہیں دیا جاتا ہے اسے بجا لاتے ہیں ۔ اور ان فرشتوں پر جو (آخرت میں )سلام علیکم کے بعد کہیں گے کہ دنیا میں تم نے صبر کیا ( یہ اسی کا بدلہ ہے ) دیکھو تو آخرت کا گھر کیسا اچھا ہے اور دوزخ کے ان پاسبانوں پر کہ جب ان سے یہ کہا جائے گا کہ اسے گرفتا ر کرکے طوق وزنجیر پہنا دو پھر اسے جہنم میں جھونک دو تو وہ اس کی طرف تیزی سے بڑھیں گے اور اسے ذرا مہلت نہ دیں گے۔ اور ہر اس فرشتے پر جس کا نام ہم نے نہیں لیا اور نہ ہمیں معلوم ہے کہ اس کا تیرے ہاں کیا مرتبہ ہے اور یہ کہ تو نے کس کام پر اسے معین کیا ہے اور ہوا زمین اورپانی میں رہنے والے فرشتوں پر اور ان پر جو مخلوقات پر معین ہیں ان سب پر رحمت نازل کر اس دن کہ جب ہر شخص اس طرح آئے گا کہ اس کے ساتھ ایک ہنکانے والا ہو گا اورایک گواہی دینے والا اور ان سب پر ایسی رحمت نازل فرما جو ان کے لیے عزت بالائے عزت اورطہارت بالائے طہارت کا باعث ہو۔ اے اللہ ! جب تو اپنے فرشتوں اوررسولوں پر رحمت نازل کرے اورہمارے صلوة وسلام کو ان تک پہنچائے تو ہم پر بھی اپنی رحمت نازل کرنا اس لیے کہ تو نے ہمیں ان کے ذکر خیر کی توفیق بخشی ۔ بے شک تو بخشنے والا اورکریم ہے ۔

****************************************************************************************
A Supplication in Calling down Blessings upon the Bearers of the Throne and Every Angel Brought Nigh O God , as for the Bearers of Thy Throne , who never flag in glorifying Thee , never become weary of calling Thee holy , never tire of worshiping Thee , never prefer curtailment over diligence in Thy command , and are never heedless of passionate love for Thee ; Seraphiel , the Owner of the Trumpet , fixed in his gaze , awaiting Thy permission and the descent of the Command , that he may arouse through the Blast the hostages thrown down in the graves ; Michael , possessor of standing with Thee and a raised up place in Thy obedience ; Gabriel , entrusted with Thy revelation , obeyed by the inhabitants of Thy heavens , distinguished in Thy Presence , brought nigh to Thee ; the spirit who is over the angels of the veils ; and the spirit who is of Thy command – bless them and the angels below them : the residents in Thy heavens , those entrusted with Thy messages , those who become not wearied by perseverance , or exhausted and flagged by toil , whom passions distract not from glorifying Thee , and whose magnification of Thee is never cut off by the inattention of heedless moments ; their eyes lowered , they do not attempt to look at Thee ; their chins bowed , they have long desired what is with Thee ; unrestrained in mentioning Thy boons , they remain humble before Thy mightiness and the majesty of Thy magnificence ; and those who say when they look upon Gehenna roaring over the people who disobeyed Thee : `Glory be to Thee , we have not worshiped Thee with the worship Thou deservest !’ Bless them , and Thy angels who are the Reposeful , those of proximity to Thee , those who carry the unseen to Thy messengers , those entrusted with Thy revelation , the tribes of angels whom Thou hast singled out for Thyself , freed from need for food and drink by their calling Thee holy , and made to dwell inside Thy heavens’ layers , those who will stand upon the heavens’ borders when the Command descends to complete Thy promise , the keepers of the rain , the drivers of the clouds , him at whose driving’s sound is heard the rolling of thunder , and when the reverberating clouds swim before his driving , bolts of lightning flash ; the escorts of snow and hail , the descenders with the drops of rain when they fall , the watchers over the treasuries of the winds , those charged with the mountains lest they disappear , those whom Thou hast taught the weights of the waters and the measures contained by torrents and masses of rain ; the angels who are Thy messengers to the people of the earth with the disliked affliction that comes down and the beloved ease ; the devoted , noble scribes , the watchers , noble writers , the angel of death and his helpers , Munkar and Nakir , Ruman , the tester in the graves , the circlers of the Inhabited House , Malik and the guardians , Ridhwan and the gatekeepers of the gardens , those who ‘disobey not God in what He commands them and do what they are commanded’ ; those who say , ‘Peace be upon you , for that you were patient – and fair is the Ultimate Abode’ ; the Zabaniya , who , when it is said to them , ‘take him , and fetter him , then roast him in hell’ , hasten to accomplish it , nor do they give him any respite ; him whom we have failed to mention , not knowing his place with Thee , nor with which command Thou hast charged him ; and the residents in the air , the earth , and the water , and those of them charged over the creatures ; bless them on the day when ‘every soul will come , with it a driver and a witness’ , and bless them with a blessing that will add honour to their honour and purity to their purity . O God , and when Thou blessest Thy angels and Thy messengers and Thou extendest our blessings to them , bless us through the good words about them which Thou hast opened up for us ! Thou art Munificent , Generous .

Blessings Upon Muhammad (p.b.u.h) & His Households – رسول اکرم ص پر درور و سلام

holy-prophet

و الحمد لله الذي من علينا بمحمد نبيه – صلي الله عليه و اله – دون الامم الماضية و القرون السالفة ، بقدرته التي لا تعجز عن شي ء و إن عظم ، و لا يفوتها شي ء و إن لطف .فختم بنا علي جميع من ذرء ، و جعلنا شهداء علي من جحد ، و كثرنا بمنه علي من قل .اللهم فصل علي محمد امينك علي وحيك ، و نجيبك من خلقك ، و صفيك من عبادك ، امام الرحمة ، و قائد الخير ، و مفتاح البركة .كما نصب لامرك نفسه .و عرض فيك للمكروه بدنه .و كاشف في الدعاء اليك حامته .و حارب في رضاك اسرته .و قطع في احياء دينك رحمه .و اقصي الادنين علي جحودهم .و قرب الاقصين علي استجابتهم لك .و والي فيك الابعدين .و عادي فيك الاقربين .و اداب نفسه في تبليغ رسالتك .و اتعبها بالدعاء الي ملتك .و شغلها بالنصح لاهل دعوتك .و هاجر الي بلاد الغربة ، و محل النأي عن موطن رحله ، و موضع رجله ، و مسقط رأسه ، و مأنس نفسه ، ارادة منه لاعزاز دينك ، و استنصارا علي اهل الكفر بك .حتي استتب له ما حاول في اعدائك .و استتم له ما دبر في اوليائك .فنهد اليهم مستفتحا بعونك ، و متقويا علي ضعفه بنصرك .فغزاهم في عقر ديارهم .و هجم عليهم في بحبوحة قرارهم .حتي ظهر امرك ، و علت كلمتك ، و لو كره المشركون .اللهم فارفعه بما كدح فيك الي الدرجة العليا من جنتك .حتي لا يساوي في منزلة ، و لا يكافأ في مرتبة ، و لا يوازيه لديك ملك مقرب ، و لا نبي مرسل .و عرفه في اهله الطاهرين و امته المؤمنين من حسن الشفاعة اجل ما وعدته .يا نافذ العدة ، يا وافي القول ، يا مبدل السيئات باضعافها من الحسنات إنك ذو الفضل العظيم .
****************************************************************************************
تمام تعریفیں اس اللہ کے لیے جس نے اپنے پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بعثت سے ہم پر وہ احسان فرمایا جو نہتہ امتوں پر کیا اور نہ پہلے لوگوں پر۔ اپنی قدرت کی کار فرمائی سے جو کسی شے سے عاجز و درماندہ نہیں ہوتی اگرچہ وہ کتنی ہی بڑی ہو اورکوئی چیز اس کے قبضہ سے نکلنے نہیں پاتی اگرچہ وہ کتنی ہی لطیب ونازک ہو ا س نے اپنے مخلوقات میں ہمیں آخری امت قرار دیا اورانکار کرنے والوں پر گواہ بنایا ۔ اوراپنے لطف وکرم سے کم تعداد والوں کے مقابلہ میں ہمیں کثرت دی۔ اے اللہ ! تو رحمت نازل فرما محمد اوران کی آل پر جو تیری وحی کے امانتدار تمام مخلوقات میں تیرے برگزیدہ ، تیرے بندوں میں پسندیدہ رحمت کے پیشوا ، خیر وسعادت کے پیشتر وبرکت کا سرچشمہ تھے جس طرح انہوں نے تیری شریعت کی خاطر اپنے کو مضبوطی سے جمایا اورتیری راہ میں اپنے جسم کو ہر طرح کے آزار کا نشانہ بنایا اورتیری طرف دعوت دینے کے سلسلہ میں اپنے عزیروں سے دشمنی کا مظاہرہ کیا،اورتیری رضا کے لیے اپنے قوم قبیلے سے جنگ کی اورتیرے دین کو زندہ کرنے کے لیے سب رشتے ناطے قطع کر لئے ۔ نزدیک کے رشتہ داروں کو انکار کی وجہ سے دور دیا اوردور والوں کو اقرار کی وجہ سے قریب کیا۔ اورتیری وجہ سے دور والوں سے دوستی اورنزدیک والوں سے دشمنی رکھی اور تیرا پیغام پہنچانے کے لیے تکلیفیں اٹھائیں اوردین کی طرف دعوت دینے کے سلسلہ میں زحمتیں برداشت کیں اور اپنے نفس کو ان لوگوں کے پند ونصیحت کرنے میں مصروف رکھا جنہوں نے تیری دعوت کو قبول کیا ۔ اوراپنے مضل سکونت ومقام رہائش اورجائے ولادت ووطن مالوف سے پردیس کی سرزمین اوردور ودراز مقام کی طرف محض اس مقصد سے ہجرت کی کہ تیرے دین کو مضبوط کریں اور تجھ سے کفر اختیار کرنے والوں پر غلبہ پائیں یہاں تک کہ تیرے دشمنوں کے بارے میں جو انہو ں نے چاہا تھا وہ مکمل ہو گیا اورتیرے دوستوں (کو جنگ و جہاد پر آمادہ کرنے ) کی تدبیریں کامل ہو گئیں تو وہ تیری نصرت سے فتح وکامرانی چاہتے ہوئے اوراپنی کمزوری کے باوجود تیری مدد کی پشت پناہی پر دشمنوں کے مقابلہ کے لیے اٹھ کھڑے ہوئے اوران کے گھروں کے حدود میں ان سے لڑے یہاں تک کہ ان گھروں کے وسط میں ان پر ٹوٹ پڑے ۔ یہاں تک کہ تیرا دین غالب اورتیرا کلمہ بلند ہو کر رہا۔ اگرچہ مشرک اسے ناپسند کرتے رہے ۔ اے اللہ انہو ں نے تیری خاطر جو کوششیں کی ہیں ان کے عوض انہیں جنت میں ایسا بلند درجہ عطا کر کہ کوئی مرتبہ میں ان کے برابر نہ ہو سکے اور نہ منزلت میں ان کا ہم پایہ قرار پا سکے اورنہ کوئی مقرب بارگاہ فرشتہ اورنہ کوئی فرستادہ پیغمبرتیرے نزدیک ان کا ہمسر ہو سکے اوران کے اہل بیت اطہار اورمومنین کی جماعت کے بارے میں جس قابل قبول شفاعت کا تو نے ان سے وعدہ فرمایا ہے اس وعدہ سے بڑھ کر انہیں عطا فرما۔ اے وعدہ کے نافذ کرنے والے، قول کے پورا کرنے اوربرائیوں کو کئی گنا زائد اچھائیوں سے بدل دینے والے بے شک تو فضل عظیم کا مالک ہے ۔

****************************************************************************************
After this praise of God he would supplicate by calling down blessings upon God’s Messenger Praise belongs to God , who was kind to us through Muhammad ( God bless him and his Household ) to the exclusion of past communities and bygone generations , displaying thereby His power , which nothing can render incapable , though it be great , and nothing can escape , though it be subtle . He sealed through us all He created , appointed us witnesses over those who deny , and increased us by His kindness over those who are few . O God , bless Muhammad , entrusted by Thee with Thy revelation , distinguished by Thee among Thy creatures , devoted to Thee among Thy servants , the imam of mercy , the leader of good , the key to blessing , who wearied his soul for Thy affairs , exposed his body to detested things for Thy sake , showed open enmity toward his next of kin by summoning to Thee , fought against his family for Thy good pleasure , cut the ties of the womb in giving life to Thy religion , sent far those close because of their denial , brought near those far because of their response to Thee , showed friendship to the most distant for Thy sake , displayed enmity toward the nearest for Thy sake , made his soul persevere in delivering Thy message , tired it in summoning to Thy creed , busied it in counselling those worthy of Thy summons , migrated to the land of exile and the place of remoteness from the home of his saddlebags , the walkway of his feet , the ground of his birth , and the intimate abode of his soul , desiring to exalt Thy religion and seeking help against those who disbelieved in Thee , until what he attempted against Thy enemies went well with him and what he arranged for Thy friends was accomplished . He rose up against them seeking victory through Thine aid , becoming strong in spite of his weakness with Thy help . He fought against them in the centre of their cities and attacked them in the midst of their dwellings , until Thy command prevailed , and Thy word rose up , though the idolaters were averse . O God , so raise him , because of his labours for Thy sake , to the highest degree of Thy Garden , that none may equal him in station , none may match him in level , and no angel brought nigh or prophet sent out may parallel him in Thy sight . And inform him concerning his Household the pure and his community the faithful of an excellent intercession , greater than what Thou hast promised him ! O Keeper of promises ! O Faithful to Thy word ! O He who changes evil deeds into manifold good deeds ! Thou art of bounty abounding !

In Praise of God – خداوند عالم کی حمد و ستائش

sahifa-e-sajadia

الحمد لله الاول بلا اول كان قبله ، و الاخر بلا اخر يكون بعده .الذي قصرت عن رؤيته ابصار الناظرين ، و عجزت عن نعته اوهام الواصفين .ابتدع بقدرته الخلق ابتداعا ، و اخترعهم علي مشيته اختراعا .ثم سلك بهم طريق ارادته ، و بعثهم في سبيل محبته ، لا يملكون تاخيرا عما قدمهم اليه ، و لا يستطيعون تقدما الي ما اخرهم عنه .و جعل لكل روح منهم قوتا معلوما مقسوما من رزقه ، لا ينقص من زاده ناقص ، و لا يزيد من نقص منهم زائد .ثم ضرب له في الحيوة اجلا موقوتا ، و نصب له امدا محدودا ، يتخطأ اليه بايام عمره ، و يرهقه باعوام دهره ، حتي إذا بلغ اقصي اثره ، و استوعب حساب عمره ، قبضه الي ما ندبه اليه من موفور ثوابه ، أو محذور عقابه ، ليجزي الذين اساؤا بما عملوا و يجزي الذين احسنوا بالحسني .عدلا منه ، تقدست اسماؤه ، و تظاهرت الاؤه ، لا يسئل عما يفعل و هم يسئلون .و الحمد لله الذي لو حبس عن عباده معرفة حمده علي ما ابلاهم من مننه المتتابعة ، و اسبغ عليهم من نعمه المتظاهرة ، لتصرفوا في مننه فلم يحمدوه ، و توسعوا في رزقه فلم يشكروه .و لو كانوا كذلك لخرجوا من حدود الانسانية الي حد البهيمية فكانوا كما وصف في محكم كتابه : إن هم إلا كالانعام بل هم اضل سبيلا .و الحمد لله علي ما عرفنا من نفسه ، و الهمنا من شكره ، و فتح لنا من ابواب العلم بربوبيته ، و دلنا عليه من الاخلاص له في توحيده ، و جنبنا من الالحاد و الشك في امره .حمدا نعمر به فيمن حمده من خلقه ، و نسبق به من سبق الي رضاه و عفوه .حمدا يضي ء لنا به ظلمات البرزخ ، و يسهل علينا به سبيل المبعث ، و يشرف به منازلنا عند مواقف الاشهاد ، يوم تجزي كل نفس بما كسبت و هم لا يظلمون ، يوم لا يغني مولي عن مولي شيئا و لا هم ينصرون .حمدا يرتفع منا الي اعلي عليين في كتاب مرقوم يشهده المقربون .حمدا تقربه عيوننا إذا برقت الابصار ، و تبيض به وجوهنا إذا اسودت الابشار .حمدا نعتق به من اليم نار الله الي كريم جوار الله .حمدا نزاحم به ملائكته المقربين ، و نضام به انبياءه المرسلين في دار المقامة التي لا تزول ، و محل كرامته التي لا تحول .و الحمد لله الذي اختار لنا محاسن الخلق ، و اجري علينا طيبات الرزق .و جعل لنا الفضيلة بالملكة علي جميع الخلق ، فكل خليقته منقادة لنا بقدرته ، و صائرة الي طاعتنا بعزته .و الحمد لله الذي اغلق عنا باب الحاجة إلا اليه ، فكيف نطيق حمده ؟ أم متي نؤدي شكره ؟ ! لا ، متي ؟ .و الحمد لله الذي ركب فينا الات البسط ، و جعل لنا ادوات القبض ، و متعنا بارواح الحيوة ، و اثبت فينا جوارح الاعمال ، و غذانا بطيبات الرزق ، و اغنانا بفضله ، و اقنانا بمنه .ثم امرنا ليختبر طاعتنا ، و نهانا ليبتلي شكرنا ، فخالفنا عن طريق امره ، و ركبنا متون زجره ، فلم يبتدرنا بعقوبته ، و لم يعاجلنا بنقمته ، بل تأنانا برحمته تكرما ، و انتظر مراجعتنا برأفته حلما .و الحمد لله الذي دلنا علي التوبه التي لم نفدها إلا من فضله ، فلو لم نعتدد من فضله إلا بها لقد حسن بلاؤه عندنا ، و جل احسانه الينا ، و جسم فضله علينا .فما هكذا كانت سنته في التوبة لمن كان قبلنا ، لقد وضع عنا ما لا طاقة لنا به ، و لم يكلفنا الا وسعا ، و لم يجشمنا إلا يسرا ، و لم يدع لاحد منا حجة و لا عذرا .فالهالك منا من هلك عليه ، و السعيد منا من رغب اليه .و الحمد لله بكل ما حمده به ادني ملائكته اليه و اكرم خليقته عليه و ارضي حامديه لديه .حمدا يفضل سائر الحمد كفضل ربنا علي جميع خلقه .ثم له الحمد مكان كل نعمة له علينا و علي جميع عباده الماضين و الباقين عدد ما احاط به علمه من جميع الاشياء ، و مكان كل واحدة منها عددها اضعافا مضاعفة ابدا سرمدا الي يوم القيمة .حمدا لا منتهي لحده ، و لا حساب لعدده ، و لا مبلغ لغايته ، و لا انقطاع لامده .حمدا يكون وصلة الي طاعته و عفوه ، و سببا الي رضوانه ، و ذريعة الي مغفرته ، و طريقا الي جنته ، و خفيرا من نقمته ، و امنا من غضبه ، و ظهيرا علي طاعته ، و حاجزا عن معصيته ، و عونا علي تأدية حقه و وظائفهحمدا نسعد به في السعداء من اوليائه ، و نصير به في نظم الشهداء بسيوف اعدائه ، إنه ولي حميد .
****************************************************************************************

سب تعریف اس اللہ کے لۓ ہے جو ایسا اوّل ہے جس کے پہلے کوئی اوّل نہ تھا اور ایسا آخر ہے جس کے بعد کوئی آخر نہ ہو گا۔ وہ خدا جس کے دیکھنے سے دیکھنے والوں کی آنکھیں عاجز اور جس کی توصیف و ثنا سے وصف بیان کرنے والوں کی عقلیں قاصر ہیں۔ اس نے کائنات کو اپنی قدرت سے پیدا کیا، اور اپنے منشا‎ۓ ازلی سے جیسا چاہا اسے ایجاد کیا ۔ پھر انہیں اپنے ارادہ کے راستے پر چلایا اور اپنی محبت کی راہ پر ابھارا۔ جن حدود کی طرف انہیں آگے بڑھایا ہے ان سے پیچھے رہنا اور جن سے پیچھے رکھا ہے ان سےآگے بڑھنا ان کے قبضہ و اختیار سے باہر ہے ۔ اسی نے ہر ( ذی) روح کے لیۓ اپنے ( پیدا کردہ ) رزق سے معیّن و معلوم روزی مقرر کر دی ہے جسے زیادہ دیا ہے اسےکوئی گھٹانے والا گھٹا نہیں سکتا اور جسے کم دیا ہے اسے کوئی بڑھانے والا بڑھا نہیں سکتا ۔ پھر یہ کہ اسی نے اس کی زندگی کا ایک وقت مقرر کر دیا اور ایک معینہ مدت اس کے لۓ ٹھہرا دی ۔ جس مدت کی طرف وہ اپنی زندگی کے دنوں سے بڑھتا اور اپنے زمانہ زیست کے سالوں سے اس کے نزدیک ہوتا ہے یہاں تک کہ جب زندگی کی انتہا کو پہنچ جاتا ہے اور اپنی عمر کا حساب پورا کر لیتا ہے تو اللہ اسے اپنے ثواب بے پایاں تک جس کی طرف اسے بلایا تھا یا خوفناک عذاب کی جانب جسے بیان کر دیا تھا قبض روح کے بعد پہنچا دیتا ہے تاکہ اپنے عدل کی بناء پر بروں کی اس کی بد اعمالیوں کی سزا اور نیکو کاروں کو اچھا بدلا دے ۔ اس کے نام پاکیزہ اور اس کی نعمتوں کا سلسلہ لگاتار ہے ۔ وہ جو کرتا ہے اس کی پوچھہ گھچہ اس سے نہیں ہو سکتی اور لوگوں سے بہرحال باز پرس ہو گی ۔ تمام تعریف اس اللہ کے لۓ ہے کہ اگر وہ اپنے بندوں کو حمد و شکر کی معرفت سے محروم رکھتا ان پیہم عطیوں پر جو اسں نے دیۓ ہیں اور ان پے درپے نعمتوں پر جو اس نے فراوانی سے بخشی ہیں تو وہ اس کی نعمتوں میں تصّرف تو کرتے مگر اس کی حمد نہ کرتے ۔ اور اس کے رزق میں فارغ البالی سے بسر تو کرتے مگر اس کا شکر بجا نہ لاتے اور ایسے ہوتے تو انسانیت بی حدوں سے نکل کر چوپالوں کی حد میں آ جاتے ، اور اس توصیف کے مصداق ہوتے جو اس نے اپنی محکم کتاب میں کی ہے کہ وہ تو بس چوپائیوں کے مانند ہیں بلکہ ان سے بھی زیادہ راہ راست سے بھٹکتے ہو‎ۓ ۔ تمام تعریف اللہ کے لۓ ہے کہ اس نے اپنی ذات کو ہمیں پہچنوایا اور حمد و شکر کا طریقہ سمجھایا اور اپنی پروردگاری پر علم و اطلاع کے دروازے ہمارے لۓ کھول دیۓ اور توحید میں تنزیہ و اخلاص کی طرف رہنمائی کی اور اپنے معاملہ شرک و کجروی سے ہمیں بچایا ۔ ایسی حمد جس کے ذریعے ہم اس کی مخلوقات میں سے حمد گزاروں میں زندگی بسر کریں اور اس کی خوشنودی و بخشش کی طرف بڑھنے والوں سے سبقت لے جائیں ۔ ایسی حمد جس کی بدولت ہمارے لۓ برزخ کی تاریکیاں چھٹ جائیں اور جو ہمارے لۓ قیامت کی راہوں کو آسان کر دے اور حشر کے مجمع عام میں ہماری قدرومنزلت کو بلند کر دے جس دن ہر ایک کو اس کے کۓ کا بدلہ دیا جاۓ گا اور ان پر کسی طرح کا ظلم نہ ہو گا ۔ جس دن کوئی دوست کسی دوست کےکچھ کام نہ آۓ گا اور نہ ان کی مدد کی جاۓ گی ۔ ایسی حمد جو ایک لکھی ہوئی کتاب میں ہے جس کی مقرب فرشتے نگہداشت کرتے ہیں ہماری طرف سے بہشت بریں کے بلند ترین درجات تک بلند ہو ، ایسی حمد جس سے ہماری آنکھوں میں ٹھنڈک آ‎ۓ جبکہ تمام آنکھیں حیرت و دہشت سے پھٹی کی پھٹی رہ جائیں گی ۔ اور ہمارے چہرے روشن و درخشان ہوں جبکہ تمام چہرے سیاہ ہوں گے ۔ایسی حمد جس کے ذریعہ ہم اللہ کی بھڑکاتی ہوئی اذیت دہ آگ سے آزادی پا کر اس کے جوار رحمت میں آ جائیں ۔ ایسی حمد جس کے ذریعہ ہم اس کے مقرب فرشتوں کے ساتھہ شانہ بشانہ بڑھتے ہو‎ۓ ٹکرائیں اور اس منزل جاوید و مقام عزت و رفعت میں جسے تغیر و زوال نہیں اس کے فرستادہ پیغمبروں کے ساتھ یکجا ہوں ۔ تمام تعریف اس اللہ کے لۓ ہے جس نے خلقت و آفرینش کی تمام ہمارے لۓ منتخب کیں اور پاک وپاکیزہ رزق کا سلسلہ ہمارے لۓ جاری کیا اور ہمیں غلبہ اور تسلط دے کر تمام مخلوقات پر برتری عطا کی ۔ چنانچہ تمام کائنات اس کی قدرت سے ہمارے زیر فرمان اور اس کی قوت اور سربلندی کی بدولت ہماری اطاعت پر امادہ ہے ۔ تمام تعریف اس اللہ کے لۓ ہے جس نے اپنے سواء طلب و حاجت کا ہر دروازہ ہمارے لۓ بند کر دیا تو ہم ( اس حاجت و احتیاج کے ہوتے ہو‌ۓ ) کیسے اس کی حمد سے عہدہ برآ ہو سکتے ہیں اور کب اس کا شکر ادا کر سکتے ہیں ۔ نہیں! کسی وقت بھی اس کا شکر ادا نہیں ہو سکتا ۔ تمام تعریف اس اللہ کے لۓ ہے جس نے ہمارے (جسموں میں) پھیلنے والے اعصاب اور سمٹنے والے عضلات ترتیب دیۓ اور زندگی کی آسائشوں سے بہرہ مند کیا اور کار و کسب کے اعضاء ہمارے اندر ودیعت فرماۓ اور پاک و پاکیزہ روزی سے ہماری پرورش کی اور اپنے فضل وکرم کے ذریعہ ہمیں بےنیاز کر دیا اور اپنے لطف و احسان سے ہمیں (نعمتوں کا ) سرمایہ بخشا۔ پھر اس نے اپنے اوامر کی پیروی کا حکم دیا تاکہ فرمانبرداری میں ہم کو آزما‎ۓ اور نواہی کے ارتکاب سے منع کیا تاکہ ہمارے شکر کو جانچے مگر ہم نے اس کے حکم کی راہ سے انحراف کیا اور نواحی کے مرکب پر سوار ہو لۓ ۔ پھر بھی اس نے عذاب میں جلدی نہیں کی ، اور سزا دینے میں تعجیل سے کام نہیں لیا بلکہ اپنے کرم و رحمت سے ہمارے ساتھ نرمی کا برتاؤ کیا اور حلم و رافت سے ہمارے باز آ جانے کا منتظر رہا ۔ تمام تعریف اس اللہ کے لۓ ہے جس نے ہمیں توبہ کی راہ بتائی کہ جسے ہم نے صرف اس کے فضل و کرم کی بدولت حاصل کیا ہے ۔ تو اگر ہم اس کی بخششوں میں سے اس توبہ کے سواء اور کوئی نعمت شمار میں نہ لائیں تو یہی توبہ ہمارے حق میں اس کا عمدہ انعام ، بڑا احسان اور عظیم فضل ہے اس لۓ کہ ہم سے پہلے لوگوں کے لۓ توبہ کے بارے میں اس کا یہ رویّہ نہ تھا ۔ اس نے تو جس چیز کے برداشت کرنے کی ہمیں طاقت نہیں ہے وہ ہم سے ہٹا لی اور ہماری طاقت سے بڑھ کر ہم پر ذمہ داری عائد نہیں کی اور صرف سہل و آسان چیزوں کی ہمیں تکلیف دی ہے اور ہم میں سے کسی ایک کے لۓ حیل و حجت کی گنجائش نہیں رہنے دی ۔ لہذا وہی تباہ ہونے والا ہے جو اس کی منشا کے خلاف اپنی تباہی کا سامان کرے ، اور وہی خوش نصیب ہے جو اس کی طرف توجہ و رغبت کرے۔ اللہ کے لۓ حمد و ستائش ہے ہر وہ حمد جو اس کے مقرب فرشتے بزرگ ترین مخلوقات اور پسندیدہ حمد کرنے والے بجالاتے ہیں ۔ ایسی ستائش جو دوسری ستائشوں سے بڑھی چڑھی ہوئی ہو جس طرح ہمارا پروردگار تمام مخلوقات سے بڑھا ہوا ہے ۔ پھر اسی کے لۓ حمد و ثناہ ہے ۔ اس کی ہر ہر نعمت کے بدلے میں جو اس نے ہمیں اور تمام گزشتہ وباقی ماندہ بندوں کو بخشی ہے ان تمام چیزوں کے شمار کے برابر جن پر اس کا علم حاوی ہے اور ہر نعمت کے مقابلہ میں دوگنی چوگنی جو قیامت کے دن تک دائمی و ابدی ہو ۔ ایسی حمد جس کا کوئی آخری کنار اور جس کی گنتی کا کوئی شمار نہ ہو ۔ جس کی حد ونہایت دسترس سے باہر اور جس کی مدّت غیر مختتم ہو ۔ ایسی حمد جو اس کی اطاعت و بخشش کا وسیلہ ، اس کی رضامندی کا سبب ، اس کی مغفرت کا ذریعہ ، جنّت کا راستہ ، اس کے عذاب سے پناہ ،اس کے غضب سے امان ، اس کی اطاعت میں معیّن ، اس کی معصیت سے مانع اور اس کے حقوق و واجبات کی ادائیگی میں مددگار ہو ۔ ایسی حمد جس کے ذریعے اس کے خوش نصیب دوستوں میں شامل ہو کر خوش نصیب قرار پائیں اور شہیدوں کے زمرہ میں شمار ہوں جو اس کے دشمنوں کی تلواروں سے شہید ہو‎ۓ ۔ بے شک وہی مالک مختار اور قابل ستائش ہے ۔

****************************************************************************************
1- When he began to supplicate , he would begin praise and laudation of God saying : Praise belongs to God , the First , without a first before Him , the Last , without a last behind Him . Beholders’ eyes fall short of seeing Him , describers’ imaginations are not able to depict Him . He originated the creatures through His power with an origination , He devised them in accordance with His will with a devising . Then he made them walk on the path of His desire , He sent them out on the way of His love . They cannot keep back from that to which He has sent them forward , nor can they go forward to that from which He has kept them back . He assigned from His provision to each of their spirits a nourishment known and apportioned . No decreaser decreases those of them whom He increases , no increaser increases those of them whom He decreases . Then for each spirit He strikes a fixed term in life , for each He sets up a determined end ; he walks toward it through the days of his span , he overtakes it through the years of his time . Then , when he takes his final step and embraces the reckoning of his span , God seizes him to the abundant reward or the feared punishment to which He has called him , ‘That He may repay those who do evil for what they have done and repay those who do good with goodness’ , as justice from Him ( holy are His names , and manifest His boons ) . ‘He shall not be questioned as to what He does , but they shall be questioned’ . Praise belongs to God , for , had He withheld from His servants the knowledge to praise Him for the uninterrupted kindnesses with which He has tried them and the manifest favours which He has lavished upon them , they would have moved about in His kindnesses without praising Him , and spread themselves out in His provision without thanking Him . Had such been the case , they would have left the bounds of humanity for that of beastliness and become as He has described in the firm text of His Book : ‘They are but as the cattle-nay , but they are further astray from the way !’ . Praise belongs to God , for the true knowledge of Himself He has given to us , the thanksgiving He has inspired us to offer Him , the doors to knowing His Lordship He has opened for us , the sincerity toward Him in professing His Unity to which He has led us , and the deviation and doubt in His Command from which He has turned us aside ; a praise through which we may be given long life among those of His creatures who praise Him , and overtake those who have gone ahead toward His good pleasure and pardon ; a praise through which He will illuminate for us the shadows of the interworld , ease for us the path of the Resurrection , and raise up our stations at the standing places of the Witnesses on the day ‘when every soul will be repaid for what it has earned – they shall not be wronged’ ; ‘the day a master shall avail nothing a client , and they shall not be helped’ ; a praise which will rise up from us to the highest of the Illiyun in ‘a book inscribed , witnessed by those brought nigh’ , a praise whereby our eyes may be at rest when sight is dazzled , our faces whitened when skins are blackened , a praise through which we may be released from God’s painful Fire and enter God’s generous neighbourhood , a praise by which we may jostle the angels brought nigh and join the prophets , the envoys , in a House of Permanence that does not remove , the Place of His Generosity that does not change . Praise belongs to God , who chose for us the good qualities of creation , granted us the agreeable things of provision , and appointed for us excellence through domination over all creation ; every one of His creatures submits to us through His power and comes to obey us through His might . Praise belongs to God , who locked for us the gate of need except toward Him . So how can we praise Him ? When can we thank Him ? Indeed , when ? Praise belongs to God , who placed within us the organs of expansion , assigned for us the agents of contraction , gave us to enjoy the spirits of life , fixed within us the limbs of works , nourished us with the agreeable things of provision , freed us from need through His bounty , and gave us possessions through His kindness . Then He commanded us that He might test our obedience and prohibited us that He might try our thanksgiving . So we turned against the path of His commandments and mounted the backs of His warnings . Yet He hurried us not to His punishment , nor hastened us on to His vengeance . No , He went slowly with us through His mercy , in generosity , and awaited our return through His clemency , in mildness . Praise belongs to God , who showed us the way to repentance , which we would not have won save through His bounty . Had we nothing to count as His bounty but this , His trial of us would have been good , His beneficence toward us great , His bounty upon us immense . For such was not His wont in repentance with those who went before us . He has lifted up from us ‘what we have not the strength to bear’ , charged us only to our capacity , imposed upon us nothing but ease , and left none of us with an argument or excuse . So the perisher among us is he who perishes in spite of Him and the felicitous among us he who beseeches Him . And praise belongs to God with all the praises of His angels closest to Him , His creatures most noble in His eyes , and His praisers most pleasing to Him ; a praise that may surpass other praises as our Lord surpasses all His creatures . Then to Him belongs praise , in place of His every favour upon us and upon all His servants , past and still remaining , to the number of all things His knowledge encompasses , and in place of each of His favours , their number doubling and redoubling always and forever , to the Day of Resurrection ; a praise whose bound has no utmost end , whose number has no reckoning , whose limit cannot be reached , whose period cannot be cut off ; a praise which will become a link to His obedience and pardon , a tie to His good pleasure , a means to His forgiveness , a path to His Garden , a protector against His vengeance , a security against His wrath , an aid to obeying Him , a barrier against disobeying Him , a help in fulfilling His right and His duties ; a praise that will make us felicitous among His felicitous friends , and bring us into the ranks of those martyred by the swords of His enemies . He is a Friend , Praiseworthy !