کالعدم سپاہ صحابہ نے ملعون ملک اسحاق گروپ کو دو ہفتے کا الٹی میٹم دے دیا Reviewed by Momizat on . فنڈزواپس اور قیادت پر اعتماد نہ کیا تو جماعت سے نکال دیا جائے گا۔مرکزی اجلاس میں فیصلہ ۔ پریل شاہ ۔ملعون اورنگزیب فاروقی اور خلیفہ عبدالقیوم باغی گروپ سے ملاقات فنڈزواپس اور قیادت پر اعتماد نہ کیا تو جماعت سے نکال دیا جائے گا۔مرکزی اجلاس میں فیصلہ ۔ پریل شاہ ۔ملعون اورنگزیب فاروقی اور خلیفہ عبدالقیوم باغی گروپ سے ملاقات Rating:
You Are Here: Home » Pakistan News » کالعدم سپاہ صحابہ نے ملعون ملک اسحاق گروپ کو دو ہفتے کا الٹی میٹم دے دیا

کالعدم سپاہ صحابہ نے ملعون ملک اسحاق گروپ کو دو ہفتے کا الٹی میٹم دے دیا

malick ishaq
فنڈزواپس اور قیادت پر اعتماد نہ کیا تو جماعت سے نکال دیا جائے گا۔مرکزی اجلاس میں فیصلہ ۔ پریل شاہ ۔ملعون اورنگزیب فاروقی اور خلیفہ عبدالقیوم باغی گروپ سے ملاقات کریں گے۔ سندھ ۔ بلو چستان۔ اور خیبر پختون میں ملعون ملک اسحاق گروپ کا اثرو رسوخ نہیں ہے ۔ زرائع
کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) نے ملک اسحاق گروپ کو دو ہفتے کا الٹی میٹم دے دیاہے۔ دو ہفتوں میں غیر مشروط طور پر ملک اسحاق گروپ کو نہ صرف جمع کردہ فنڈ واپس کرنا ہو گا بلکہ جماعت کی قیادت پر اعتمادبھی کرنا ہو گا۔ ، بصورت دیگر کا روائی کا فیصلہ کرلیا گیاہے ۔ جس کے لئیے کمیٹی بھی بنا دی گئی ہے ۔کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) اس وقت تقسیم کے خطرے سے دو چار ہے اور عملی طور پر یہ تقسیم وجود میں آچکی ہے ۔ملعونملک اسحاق گروپ نے رمضا ن المبارک میں پنجاب بھر میں اپنے کنوینر مقرر کر دیئے ہیں اور یہ گروپ ہر شہر کو ٹا رگٹ دے کر فنڈز بھی اکھٹے کر چکا ہے، جس کی ایک مثال یہ ہے کہ رمضا ن المبارک سے قبل ملعون ملک اسحاق نے جنوبی پنجاب کی ایک تحصیل کا دورہ کیا ، وہاں اپنا نمائندہ مقرر کر کے اپنے ساتھیوں کو ہد ف دیا کہ وہ رمضا ن المبارک میں 8 لاکھ روپے فنڈز اکھٹا کریں ۔مضا ن المبارک کے آخر میں یہ گروپ اپنے ہدف کے قریب پہنچ چکا تھا ۔ ملعون ملک اسحاق گروپ کے زرائع کے مطابق گروپ نے پنجاب میں اپنی تنظیم سازی کی خاطر 24 اگست کو لاہور میں اجلاس بلا رکھا تھا جو بعد میں ملک اسحاق کی عمرہ سے واپسی میں تاخیر کے سبب ملتوی کردیا گیا۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ ملک اسحاق گروپ نے اپنا اجلاس لاہور میں کالعدم سپاہ صحابہ کے ایک مرکز میں بلایا تھا اور اس امر کا خطرہ محسوس کیا جارہا تھا کہ کار کنوں میں تلخی کی صورتِ حال پیدا ہو سکتی ہے ۔ لیکن اجلاس کے التوا کے سبب یہ معاملہ ٹل گیا ۔ دوسری جانب کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) کا اجلاس گزشتہ دنوں جماعت کے صدر دفتر جھنگ میں ہوا جس میں مرکزی عاملہ کے تمام 12ارکان کے علاوہ چاروں صوبوں کے صدور نے بھی شرکت کی ۔ اجلاس میں جماعتی انتخابات اور حسابات کے علاوہ ملک اسحاق گروپ کا معاملہ بھی زیر بحث آیا ۔ شرکاء کی اکژیت اس قضیہ کا فیصلہ چاہتی تھی ۔ لہذاجماعت کی قیادت سے مطالبہ کیا گیا کہ اس معاملے پر گومگو کے بجائے واضح فیصلہ کیا جائے ۔ جس پر شرکاء میں 3تجاویز سامنے آئیں ۔ زریعے کا دعویٰ ہے کہ بعض شرکاء نے تجویز پیش کی کہ اب بہت ہو چکا ، جماعت ملعون ملک اسحاق اور اس کے ساتھیوں کو فارغ کر دے۔ مگر بعض شرکاء کی جانب سے کہا گیا کہ اس کے بجائے انھیں نوٹس دیا جائے کہ وہ ایک معینہ مدت میں جمع کردہ فنڈز واپس کردیں اور جماعت کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کریں وگر نہ انہیں جماعت سے نکال دیا جائے ۔ بتایا جاتا ہے کہ جماعت کی اعلیٰ قیادت نے نسبتاً نرم رویہ اختیار کرتے ہوئے کہا کہ معاملے اکع بگاڑنے کے بجائے سنبھالنے اور سلجھانے کی کوشش کی جائے ۔ لہذا طے پایا کہ کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) سندھ کے صدر پریل شاہ ، کراچی کے رہنما اورنگزیب فاروقی اور جماعت کے سر پرست خلیفہ عبد القیوم پر مشتمل ایک کمیٹی بنائی جائے جس کی قیادت خلیفہ عبد القیوم کریں گے۔ کمیٹی ملعون ملک اسحاق کی پاکستان آمد کے دو ہفتے کے اندر اندر ان سے ملاقات کرے گی اور ان سے مطالبہ کرے گی کے وہ غیر مشروط طور پر جماعت سے اپنے ا ختلافات ختم کریں اور مرکزی نائب صدر کے عہدے کا حلف ا ٹھا لیں تاکہ اختلافات اور انتشار کی کیفیت کو ختم کیا جا سکے۔ ان کے جواب کے بعد جماعت کی قیادت کوئی بھی حتمی فیصلہ کرے گی۔ زرائع کا دعویٰ ہے کہ ملعونملک اسحاق کی جانب سے اس پیشکش سے انکار کی صورت میں ان کے پورے گروپ کوجماعت سے خارج کردینے کہ سوا کوئی دوسرا فیصلہ ممکن دکھائی نہیں دیتا۔جنرل کونسل کے ارکان اس پر متفق دکھائی دیتے ہیں ۔ دوسری جانب ملعون ملک اسحاق گروپ ذرائع کاکہنا ہے کہ جماعت کا فیصلہ ان تک پہنچ چکا ہے ۔ مگر یہ یک طرفہ فیصلہ ہے ۔ اگر جماعتی قیادت معاملہ سلجھانے کا جذبہ رکھتی تو اس اجلاس میں ان کی قیادت کو بھی بلا کر سنا جانا چاہیے تھا ۔ مگر ایسا نہیں کیا گیا جس سے ان کی نیت عیاں ہے ۔ تاہم ملک گروپ اپنی حتمی پالیسی ملک اسحاق کی واپسی پر طے کرے گا زریعے کا دعویٰ ہے کہ ملک اسحاق بھی جماعت کی تقسیم نہیں چاہتے مگر چونکہ جماعت اپنے موقف اور نعرے سے ہٹ چکی ہے اور دوسرے یہ کے بعض معاملات میں بعض عہدیداروں کے خلاف سنگین نوعیت کی شکایات ہیں ، انہیں دور کیئے بغیر معاملات کو سلجھانا نا ممکن ہے ۔ جھنگ میں (اہلسنت والجماعت) کا اجلاس گو کہ پہلے سے طے شدہ تھا ، مگر اس کے باوجود اجلاس کی کاروائی کو خفیہ رکھنے کا بندوبست کیا گیا تھا ۔ اس مقصد کی خاطر ماضی کے برعکس تمام قائدین کے گارڈز کو اجلاس سے دور الگ جگہ مہیا کی گئی اور انہیں اجلاس کے قریب آنے کی اجازت نہیں دی گئی ۔ملک اسحاق گروپ کے ایک زریعے کا دعویٰ ہے کہ گارڈز اور دیگر تربیت یافتہ کار کنوں میں ان کی حمایت زیادہ ہے ۔ اس خوف سے جماعتی قیادت نے گارڈز کو اجلاس سے دور رکھا ، تاکہ ممکنہ طور پر کسی بھی رد عمل سے محفوظ رہا جا سکے ۔ دوسری جانب اجلاس شروع ہونے سے قبل تمام شرکاء کے موبائل فونز بند کر کے الگ رکھوادیئے گئے تھے ۔ اس حوالے سے ایک زریعے کا دعویٰ ہے کہ ماضی میں ایک اجلاس کے دوران کہ جس میں ملک گروپ کا معاملہ زیر بحث تھا کہ ایک کارکن نے کسی فیصلے کا sms کردیا جس کے بعد جماعت کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑا ۔ لہذا اس اجلاس میں sms کے خطرے کے پیش نظر موبا ئل فونز بند کرواکے الگ رکھوادیئے گئے تھے جو اجلاس کے بعد لوٹائے گئے۔ زرائع کا دعویٰ ہے کہ اجلاس میں شرکاء کی جانب سے فرقہ وارانہ قتل و غارت پر تشویش کا اظہار کیا گیا اور کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) کو ان وارداتوں میں ملوث کرنے کی مذمت کی گئی ۔ میڈیا پر کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) کے خلاف یک طرفہ پروپگینڈے کا بھی نوٹس لیا گیا۔لاہور سے دستیاب اطلاعات کے مطابق کالعدم سپاہ صحابہ (اہلسنت والجماعت) کے اس اجلاس کے حوالے سے لاہور میں ایک اعلیٰ سطح کے پولیس افسر اور اسلام آباد میں وزارت داخلہ کا ایک سیل خصوصی نظر رکھے ہو ئے تھا۔ ان دونوں کے حوالے سے یہ الزام عائد کیا جاتا ہے کہکالعدم جماعت کو تقسیم کرنے کی کوشش میں مصروف ہیں لاہور سے دستیاب اطلاعات کے مطابق زمہ داران کو امید تھی کہ جماعت آج ملعون ملک اسحاق گروپ کی بنیادی رکنیت ختم کر کے جماعت سے نکال دے گی مگر نسبتاً نرم فیصلے سے انہیں مایوسی ہوئی ذرائع نے واضح کیا ہے کہ تقسیم کا یہ معاملہ پنجاب کی حد تک ہی موثر دکھا ئی دیتا ہے کیو نکہ سندھ میں ملعون ملک اسحاق گروپ کے اثرات نہ ہونے کے برابر ہیں اور وہ کوشش کے باوجود کراچی میں اپنا اثر و رسوخ قائم نہیں کرپائے ایسا ہی معاملہبلو چستان۔ اور خیبر پختون میں ہے ۔

About The Author

Number of Entries : 6115

Leave a Comment

You must be logged in to post a comment.

© 2013

Scroll to top