مطالبات پورے ہونے تک میتوں کیساتھ دھرنا جاری رہے گا، لواحقین شہداء Reviewed by Momizat on . دھرنے کے شرکا کا مطالبہ ہے کہ سانحہ کوئٹہ میں ملوث ملزمان کو گرفتار کر کے کیفر کردار تک پہنچایا جائے اور کوئٹہ میں جاری دھرنے کے تینوں مطالبات تسلیم کیے جائیں ب دھرنے کے شرکا کا مطالبہ ہے کہ سانحہ کوئٹہ میں ملوث ملزمان کو گرفتار کر کے کیفر کردار تک پہنچایا جائے اور کوئٹہ میں جاری دھرنے کے تینوں مطالبات تسلیم کیے جائیں ب Rating:
You Are Here: Home » Urdu - اردو » مطالبات پورے ہونے تک میتوں کیساتھ دھرنا جاری رہے گا، لواحقین شہداء

مطالبات پورے ہونے تک میتوں کیساتھ دھرنا جاری رہے گا، لواحقین شہداء

quetta p2
دھرنے کے شرکا کا مطالبہ ہے کہ سانحہ کوئٹہ میں ملوث ملزمان کو گرفتار کر کے کیفر کردار تک پہنچایا جائے اور کوئٹہ میں جاری دھرنے کے تینوں مطالبات تسلیم کیے جائیں بصورت دیگر احتجاجی دھرنا جاری رہے گا۔
اسلام ٹائمز۔ کوئٹہ میں 43 گھنٹے سے لاشوں کے ساتھ دھرنا جاری ہے، کوئٹہ میں قیامت صغریٰ کے زخم ابھی تک رِس رہے ہیں۔ آہوں اور سسکیوں میں ڈوبی ہزارہ برادری کا دھرنا مسلسل43 گھنٹے سے جاری ہے جبکہ پشتونخوا عوامی ملی پارٹی کی کال پر شہر میں شٹرڈاؤن ہڑتال ہے۔ شہداء کے لواحقین پیاروں کی تصویریں اٹھائے جمعے کی دوپہر دو بجے سے علمدار روڈ پر دھرنا دیئے بیٹھے ہیں۔ دھرنے کے شرکاء کا کہنا ہے کہ ظلم و ستم کی حد ہو چکی ہے۔ کوئٹہ کو فوج کے حوالے نہ کیا گیا تو میتوں کی تدفین نہیں کریں گے۔ کراچی کی نمائش چورنگی پر 19 گھنٹوں سے زائد وقت سے جاری احتجاجی دھرنے خواتین بچوں اور بوڑھوں کی بڑی تعدا د موجود ہے جبکہ وقفے وقفے سے شرکاء کی آمد کا سلسلہ بھی جاری ہے، دھرنے کے شرکا کا مطالبہ ہے کہ سانحہ کوئٹہ میں ملوث ملزمان کو گرفتار کر کے کیفر کردار تک پہنچایا جائے اور کوئٹہ میں جاری دھرنے کے تینوں مطالبات تسلیم کیے جائیں بصورت دیگر احتجاجی دھرنا جاری رہے گا۔

وفاقی وزیر خورشید شاہ کوئٹہ پہنچے، انہوں نے مظاہرین سے مذاکرات کئے، مطالبات منظور کرانے کی یقین دہانی کرائی لیکن مظاہرین کو قائل نہیں کر سکے۔ خورشید شاہ نے یہ بھی کہا کہ میتوں کی تدفین کردیں چاہے دھرنا جاری رکھیں، لیکن یہ اپیل بھی مظاہرین نے مسترد کر دی۔ لاشوں کے ساتھ سڑک پر دھرنا دیئے مظاہرین نے شمعیں بھی روشن کیں۔ چیف سیکرٹری، پولیس اور ایف سی نے مظاہرین کو منانے کی کوشش کی گئی۔ دھرنا ختم کرنے کی اپیل کی گئی لیکن مظاہرین مان نہیں رہے۔ لواحقین کا کہنا ہے کہ مطالبات پورے ہونے کی صورت میں ہی پیاروں کی تدفین کریں گے۔

سانحہ کوئٹہ کے خلاف اسلام آباد، لاہور، پشاور سمیت سندھ، بلوچستان اورخیبر پختونخوا کے دیگر شہروں میں بھی احتجاج اور دھرنا دیا جا رہا ہے۔ مظاہرین کا صرف ایک ہی مطالبہ ہے کہ بلوچستان حکومت کو برطرف کرکے کوئٹہ کو فوج کے حوالے کیا جائے۔ سانحہ کوئٹہ میں شہید ہونے والوں کے لواحقین سے اظہار یکجہتی اور بلوچستان حکومت کی بےحسی کے خلاف ملک بھر میں احتجاج کیا جا رہا ہے۔ راولپنڈی اور اسلام آباد میں ہزارہ کمیونٹی، مجلس وحدت المسلمین، سیاسی کارکنوں اور سول سوسائٹی کے نمائندوں نے دھرنا دیا جس کے باعث جڑواں شہروں کو ملانے والا فیض آباد چوک کئی گھنٹوں تک بند رہا۔ لاہور میں آئی ایس او کے کارکنوں نے گورنر ہاوٴس کے باہر مظاہرہ کیا اور دھرنا دیا۔ پشاور میں شیعہ علما کونسل کی اپیل پر چوک شہباز کوچی بازار میں احتجاج کیا گیا۔ ملتان کے علاقے چوک نواں میں بھی شہداء کے لواحقین سے اظہار یکجہتی کے لیے مظاہرہ جاری ہے۔ لاڑکانہ میں مجلس وحدت المسلمین کی جانب سے جناح باغ چوک پر دھرنا دیا جا رہا ہے۔ حیدرآباد بائی پاس پر بھی دھرنا جاری ہے جس کے باعث اندرون ملک ٹریفک معطل ہے۔

گوجرانوالہ میں پنڈی بائی پاس پر دھرنا دیا گیا۔ احتجاج کے باعث اسلام آباد اور لاہور جانے والی ٹریفک 6 گھنٹے معطل رہی۔ پنجاب کے دیگر اضلاع ڈیرہ غازی خان ،بھکر، چکوال، بہاول نگر اور سیالکوٹ میں بھی احتجاج کیا گیا۔ سکھر، جیکب آباد، بدین اور سندھ کے دیگر اضلاع میں بھی مظاہرے کیے گئے۔ جعفرآباد کے ضلعی ہیڈکوارٹر ڈیرہ اللہ یار میں بھی سینکڑوں افراد سانحہ کوئٹہ کے خلاف سڑکوں پر نکل آئے اور سندھ بلوچستان شاہراہ کو بلاک کر دیا۔ کوہاٹ کے نواحی علاقے استرزئی میں بھی مظاہرہ کیا گیا۔ اسکردو میں برفباری اور خون جما دینے والی سردی کے باوجود شہریوں نے یادگار شہداء پر کئی گھنٹوں تک احتجاج کیا۔

About The Author

Number of Entries : 6115

Leave a Comment

You must be logged in to post a comment.

© 2013

Scroll to top