لاہور، جامعہ منظور الاسلامیہ تباہی سے بچ گیا، دھماکے کیلئے ریکی کرنیوالا دہشتگرد گرفتار Reviewed by Momizat on . جامعہ منظور الاسلامیہ کی انتظامیہ نے دھماکے کے لئے ریکی کرنے والے ایک نوجوان ملزم کو پکڑ کر پولیس کے حوالے کر دیا ہے۔ ذرائع کے مطابق لاہور کے جامعہ منظور اسلامی جامعہ منظور الاسلامیہ کی انتظامیہ نے دھماکے کے لئے ریکی کرنے والے ایک نوجوان ملزم کو پکڑ کر پولیس کے حوالے کر دیا ہے۔ ذرائع کے مطابق لاہور کے جامعہ منظور اسلامی Rating: 0
You Are Here: Home » Urdu - اردو » لاہور، جامعہ منظور الاسلامیہ تباہی سے بچ گیا، دھماکے کیلئے ریکی کرنیوالا دہشتگرد گرفتار

لاہور، جامعہ منظور الاسلامیہ تباہی سے بچ گیا، دھماکے کیلئے ریکی کرنیوالا دہشتگرد گرفتار

لاہور، جامعہ منظور الاسلامیہ تباہی سے بچ گیا، دھماکے کیلئے ریکی کرنیوالا دہشتگرد گرفتار
جامعہ منظور الاسلامیہ کی انتظامیہ نے دھماکے کے لئے ریکی کرنے والے ایک نوجوان ملزم کو پکڑ کر پولیس کے حوالے کر دیا ہے۔ ذرائع کے مطابق لاہور کے جامعہ منظور اسلامیہ میں دھماکے کے لئے ریکی کرنے والے ملزم کا نام سید سلمان جب کہ اس کا تعلق خیبر پختونخوا کے ضلع صوابی سے ہے۔ نوجوان لڑکے کے پاس سے شناختی کارڈ، موبائل فون اور لاہور کا نقشہ برآمد ہوا ہے جب کہ وہ پشتو، پنجابی، اردو اور انگریزی زبان بولنے میں مہارت رکھتا ہے۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے نوجوان لڑکے کا کہنا تھا کہ اسے ان کے علاقے سے تعلق رکھنے والے لیڈرز اور ایجنٹس مہمند، محسود اور انتہاد علی نے پنجابیوں اور پختونوں کو لڑانے سمیت مختلف علاقوں میں دھماکوں سے قبل ریکی کا ٹاسک سونپا تھا اور ایجنٹس کو امریکہ پیسہ فراہم کرتا ہے۔ لڑکے کا کہنا ہے کہ وہ اس سے پہلے کراچی کے علاقے کورنگی میں بھی مختلف مدارس میں دھماکوں کے لئے ریکی کا کام کرتا رہا ہے، تاہم اب ایجنٹس نے لاہور میں جامعہ منظور اسلامیہ کی ریکی کے لئے بھیجا جہاں ایک ہفتے بعد دھماکہ کرنا تھا۔

دیگر ذرائع کے مطابق جامعہ منظور الاسلامیہ لاہور سے ایک مشکوک شخص کو مدرسے انتظامیہ نے حراست میں لے کر پولیس کے حوالے کرکے دہشتگردی کا منصوبہ ناکام بنا دیا۔ صوابی کا رہائشی سلمان تین روز سے خفیہ طور پر جامعہ منظور الاسلامیہ کی نگرانی کر رہا تھا۔ مدرسہ انتظامیہ نے مشکوک سرگرمیوں کی بنا پر اس کو حراست میں لے کر پولیس کے حوالے کر دیا۔ ملزم نے دوران حراست انتظامیہ کی جانب سے پوچھ گچھ کے بعد مبینہ طور پر جامعہ منظور الاسلامیہ میں ایک ہفتے بعد دھماکہ کرنے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ دوران تفتیش ملزم سے مختلف موبائل کمپنیوں کی سمیں اور حساس علاقوں کے نقشے بھی برآمد ہوئے ہیں۔ ملزم نے مدرسے کی انتظامیہ کے سامنے اقبال جرم کرتے ہوئے کہا کہ اسے پانچ لاکھ روپوں کے عوض ریکی کے لیے بھیجا گیا تھا۔ دوسری جانب پولیس نے ملزم کو حراست میں لے کر تفتیش شروع کر دی۔

About The Author

Number of Entries : 6115

Leave a Comment

You must be logged in to post a comment.

© 2013

Scroll to top